Breaking News
Home / خبریں / پاک انڈیا / جمعہ کو یوم یکجہتی کشمیر‘ بھارتی مظالم کیخلاف سیاسی فوجی قیادت ایک
جمعہ کو یوم یکجہتی کشمیر‘ بھارتی مظالم کیخلاف سیاسی فوجی قیادت ایک

جمعہ کو یوم یکجہتی کشمیر‘ بھارتی مظالم کیخلاف سیاسی فوجی قیادت ایک

سرینگر (اے پی پی+ این این آئی) مقبوضہ کشمیر میں ایک روز قبل بھارتی فوج کے ہاتھیوں شوپیاں اور اسلام آباد میں 20 کشمیری نوجوانوں کی شہادت کیخلاف پوری مقبوضہ وادی میں حریت قیادت کی کال پر مکمل ہڑتال کی گئی۔ اس دوران مختلف مقامات پر احتجاجی مظاہرے بھی کئے گئے اور بھارت کی ریاستی دہشت گردی کیخلاف فلک شگاف نعرے لگائے گئے جبکہ بھارتی فائرنگ پیلٹ گنوں سے زخمی ہونے والے 200 سے زائد مظاہرین میں سے متعدد کی حالت نازک بتائی جارہی ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وادی میں شہادتوں کیخلاف سخت غم و غصہ پایا جاتا ہے اور سوگ کی کیفیت ہے۔ بی بی سی کے مطابق کشمیر میں حکام کا کہنا ہے حالیہ برسوں میں علاقے میں ایک ہی دن کے اندر ہونعے والا یہ سب سے زیادہ جانی نقصان ہے۔ ادھر سید علی گیلانی، میرواعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مشترکہ حریت قیادت کی کال پر نوجوانوں کے قتل کے خلاف پورے مقبوضہ علاقے میں مکمل ہڑتال رہی جبکہ سرینگر کے علاقوں سرائے بالا اور کنہ کدل میں شہید نوجوانوں کی غائبانہ نماز جنازہ ادا کی گئی ۔ دریں اثنا ءقابض انتظامیہ نے جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک کو احتجاجی مظاہروں کی قیادت سے روکنے کیلئے گرفتار کرکے کوٹھی باغ پولیس سٹیشن سرینگر میں نظربند کردیاہے جبکہ علی گیلانی اور میر واعظ کو گھروں میں پھر نظربند کردیا گیا۔ کشمیریونیورسٹی، اسلامی یونیورسٹی اور سنٹرل یونیورسٹی سمیت تمام تعلیمی اداروں کے امتحانات کوملتوی کردیاگیا جبکہ دونوں اضلاع میں موبائل فون اور ریل سروسز بھی معطل رہیں۔ دریں اثناءمقبوضہ کشمیرمیں حریت فورم کے چیئرمین میرواعظ عمرفاروق نے بھارت کی ملٹری پالیسی کومقبوضہ علاقے میں کشت وخون کی اصل وجہ قراردیتے ہوئے کہاہے کہ بھارت کشمیری نوجوانوں کوبندوق ا±ٹھانے پرمجبورکررہاہے۔ انہوں نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹرپراپنے پیغام میں بھارتی فوجےو ںکے ہاتھوںشوپےاں اور اسلام آبادکے اضلاع مےں شہید نوجوانوں کو شاندار خراج عقےدت پےش کرتے ہوئے کہا کشمیرکے سیاسی اورانسانی مسئلے کے حوالے سے ملٹری پالیسی اپنا کر بھارت کشمیری نوجوانوں کومسلح جدوجہد کی راہ اختیارکرنے پر مجبور کر رہا ہے۔ جب تک مسئلہ کشمیرکے حوالے سے بھارتی حکومت کی پالیسی جبر و قہر پر مبنی رہے گی تب تک کشمیر میں نہتے کشمیریوں کا لہو بہتا رہے گا۔ کشمےر مےڈےا سروس کے مطابق سینئر حریت رہنماءمولانا محمد عباس انصاری نے سرینگر میں جاری بیان میں شہید نوجوانوں کو زبردست خراج عقیدت پیش کیا اور کہا بھارت نے کشمیر میں ظلم و بربریت کی تمام حدیں پار کرلی ہیں۔ حریت رہنماﺅں آسیہ اندرابی، انجینئر ہلال احمدوار، فردوس احمد شاہ ، شبیر احمد زرگر‘ نائب مفتی اعظم مفتی ناصر السلام نے بھی اپنے بیانات میں شہید نوجوانوںکو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا نہتے کشمیری نوجوانوں کے خون سے ہولی کھیلی جارہی ہے کیونکہ ان کا واحد گناہ بھارت کے جبری تسلط سے آزادی مانگنا ہے۔ مقبوضہ کشمےر کے علاقے شوپیاں ہسپتال میں بھارتی فوجیوں نے پیشہ ورانہ امور میں ڈاکٹروں کی طرف سے فوجیوںکی مداخلت پر اعتراض کرنے پر ہسپتال کی عمارت میں فائرنگ کر دی ۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق ڈاکٹروں نے فوجیوں کو ہسپتال کی عمارت سے چلے جانے کا کہا کیونکہ ان کے کام میں حرج ہو رہا تھا تو انہوں نے شعبہ حادثات اور بلڈ بینک میں فائرنگ شروع کر دی۔
مقبوضہ کشمیر

اسلام آباد/لاہور (سٹاف رپورٹر+خصوصی نامہ نگار+نامہ نگاران) مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے تازہ ترین لرزہ خیز مظالم پر غور کرنے کیلئے وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی صدارت میں منعقد ہوا۔ اجلاس میں منظور کی گئی متفقہ قرار داد میں کہا گیا ہے کہ اہم دارلحکومتوں میں وزیر اعظم کے خصوصی ایلچی بھجوائے جائیں گے جو مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی طرف سے قتل و غارت گری کی تازہ لہر سے آگاہ کریں گے۔ چھ اپریل کشمیریوں کے ساتھ یوم یکجہتی کے طور پر منایا جائے گا۔قرار داد کے ذریعہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل سے اس مطالبہ کا اعادہ کیا گیا کہ عالمی ادارہ جموں و کشمیر کیلئے خصوصی نمائندے کا تقرر کرے۔ وفاقی کابینہ کے خصوصی اجلاس میں مقبوضہ کشمیر کی تازہ ترین صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کابینہ کو مقبوضہ کشمیر کی صورتحال اور بھارتی فوج کے مظالم کا شکار بے گناہ کشمیریوں کے لئے عالمی برادری کی حمایت حاصل کرنے کی کوششوں سے متعلق پریزنٹیشن دی۔اجلاس میں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں شہید کئے گئے افراد کیلئے فاتحہ خوانی اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کے لئے دعا کی گئی۔ اجلاس کے بعد وزیر خارجہ خواجہ آصف نے دفتر خارجہ میں ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چار اپریل کو وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی ، وزراء اور ارکان پارلیمنٹ ، آزاد جموں و کشمیر کی قانون ساز اسمبلی کے مشترکہ اجلاس میں شرکت کریں گے۔ وزیر اعظم خطاب بھی کریں گے۔وفاقی کابینہ نے مقبوضہ کشمیر میں پوٹا،ٹاڈا،پی ایس اے، اے ایف ایس پی اے جیسے کالے قوانین کی مذمت کی اور کہا کہ کنٹرول لائن اور ورکنگ باﺅنڈری ایسافلیش پوائنٹ ہے جہاں بھارت کی اشتعال انگیزی خطہ کے امن کو خطرہ میں ڈال رہی ہے۔ انہوں نے کہا کشمیریوں سے یکجہتی کیلئے وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس منعقد کیا گیا جس کا صرف ایک نکاتی ایجنڈا تھا۔انہوں نے بتایا کہ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال کے حوالے سے ترکی اور ایران کے وزراءخارجہ سے ان کی ٹیلیفون پر بات ہو چکی ہے۔ سعودی عرب اور اسلامی کانفرنس تنظیم کے سیکرٹری جنرل سمیت دیگر مسلم قائدین کے ساتھ بھی بات ہونی ہے کہ وہ کشمیریوں پر ہونے والے مظالم عالمی سطح پر اجاگر کرنے میں مدد کریں۔ بھارت اب تک کنترول لائن اور ورکنگ باﺅنڈری کی دو ہزار سے زائد خلاف ورزیاں کر چکا ہے۔ ان سے پوچھا گیا کہ پاکستان بھارت جنگ ہو سکتی ہے تو وزیر خارجہ نے کہا وہ اس حد تک نہیں جائیں گے۔پاکستان پر جنگ مسلط کرنے کی کوشش کی گئی تو مسلح افواج تیار ہیں۔ مزیدبرآں بھارتی مظالم کیخلاف ہماری فوجی قیادت ایک ہو گی۔ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ بھارت کا ظلم و جبر کشمیریوںکو حق ود ارادیت کی جائز،پرامن اور سیاسی جدوجہد سے نہیں روک سکتا۔ ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے سماجی رابطہ کی ویب سائٹ پر آرمی چیف کا پیغام نشر کیا ہے جس میں انہوں نے کہا ہے کہ بھارتی سیکورٹی فورسز کی طرف سے مقبوضہ کشمیر میں نہتے کشمیری عوام کے خلاف بربریت اور کنٹرول لائن و ورکنگ باﺅنڈری پر جنگ معاہدہ کی خلاف ورزیاں قابل مذمت ہیں۔ آئی این پی‘ نوائے وقت رپورٹ کے مطابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ریاستی دہشت گردی اور کشمیریوں کے قتل عام کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے ظلم اور جبر سے حق خود ارادیت کی جدوجہد کو روکنا ممکن نہیں، عوام کی جدوجہد آزادی کو دہشت گردی سے نہیں جوڑا جاسکتا، بھارت اقوام متحدہ کے فیکٹس فائنڈنگ مشن کو مقبوضہ کشمیر جانے کی اجازت دے ،یو این سیکرٹری جنرل کشمیر کے لیے خصوصی نمائندہ مقرر کریں۔ انہوں نے کشمیری نوجوانوں کی شہادت پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اپنے بیان میں کہا بھارت منفی ہتھکنڈوں سے کشمیریوں کی آواز کو نہیں دبا سکتا۔ آئی این پی کے مطابق چیئرمین سینٹ میرصادق سنجرانی نے کہا ہے عالمی برادری نہتے کشمیریوں پر تشدد اور ان کے قتل عام کا نوٹس لے، کشمیریوں کا بہیمانہ قتل بھارتی ریاستی دہشت گردی کے غیر انسانی چہرے کا عکاس ہے، بھارتی بزدلانہ اقدامات سے کشمیریوں کے حوصلے پست نہیں ہوں گے، نوائے وقت رپورٹ کے مطابق سابق وزیراعظم نوازشریف نے کہا ہے کہ نہتے کشمیریوں پر قابض بھارتی فوج کی بے رحمانہ فائرنگ قابل مذمت ہے سامراجی حربوں سے کشمیریوں کے جذبہ حریت کو نہیں کچلا جا سکتا۔ اقوام متحدہ پر لازم ہے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا نوٹس لے۔ اقوام متحدہ اپنی قراردادوں کو عملی جامہ پہنانے کی سنجیدہ کوشش کرے‘ مصدقہ رپورٹ کے مطابق مسلم لیگ (ن) کے صدرو وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی دہشت گردی کے واقعات کی شدید مذمت کی ہے۔ وزیراعلیٰ نے زخمیوں کی جلد صحت یابی کیلئے دعا کی ہے۔ بھارتی افواج نے مقبوضہ کشمیر میں بربریت اور درندگی کی انتہاءکردی اور بھارتی ظلم و ستم نے دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کی دعویدار ریاست کا گھنا¶نا اور مکرہ چہرہ بے نقاب کردیا ہے۔ مریم نواز نے کہا نہتے کشمیریوں کیخلاف بھارتی ریاستی دہشتگردی انتہائی قابل مذمت ہے۔ پاکستان مظلوم کشمیریوں کا وکیل تھا‘ ہے اور رہے گا۔ اے پی پی کے مطابق قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید احمد شاہ نے بھارتی افواج کی جانب سے نہتے کشمیریوں پر فائرنگ کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کشمیری مسلمانوں کے خون سے ہولی کھیلنے والے کشمیریوں کے جذبہ حب الوطنی کو دبا نہیں سکتے۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ریاستی دہشت گردی اور بربریت کی عمران خان نے بھی شدید مذمت کرتے ہوئے اپنے بیان میں کہا کہ مظلوم کشمیریوں پر بھارتی فورسز کے مظالم کی شدید مذمت کرتے ہیں۔چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ بھارتی فورسز نہتے کشمیریوں کو شہید کر رہی ہیں، پاکستان کے عوام حق خود ارادیت کی جدوجہد میں کشمیری عوام کے ساتھ ہیں۔ یو این سکیورٹی کونسل مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت کا نوٹس لے اور اب اسے ضرور حرکت میں آنا ہوگا۔ مزید برآں پی ٹی آئی کے پارلیمانی بورڈ کے اجلاس میں بھی بھارتی مظالم کی مذمت کی گئی۔ دریں اثناءسینٹ میں قائد ایوان راجہ ظفر الحق نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج مظلوم مسلمانوں کا قتل عام کررہی ہے۔ پاکستان اس دن کو یوم سیاہ کے طور پر منائے۔ اے پی پی کے مطابق وزیراعظم آزادکشمیر راجہ فاروق حیدر کی کال پر مقبوضہ کشمیر کے علاقہ شوپیاں میں بھارتی قابض افواج کے ہاتھوں معصوم کشمیریوں کی شہادت کے خلاف آزاد کشمیر سمیت دنیا بھر میں مقیم کشمیریوں نے احتجاجی مظاہرے کئے جبکہ وزیراعظم آزاد کشمیر نے 5 اپریل کو کل جماعتی کانفرنس بلانے کا اعلان کیا ہے۔ وزیراعظم آزاد کشمیر کی قیادت میں کشمیری قیادت نے پریس کلب اسلام آباد کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ احتجاجی مظاہرے میں رکن برطانوی پارلیمنٹ لارڈ نذیر احمد، پیپلز پارٹی آزاد کشمیر کے صدر چوہدری لطیف اکبر، سیکرٹری راجہ فیصل ممتاز راٹھور، حریت رہنماء غلام محمد صفی، وزراءحکومت سردار فاروق سکندر، احمد رضا قادری، رکن قانون ساز اسمبلی نسیمہ وانی، حریت رہنما فیض نقشبندی، عبدالحمید لون سمیت بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ وزیراعظم راجہ فاروق حیدر کشمیری شہداءکا ذکر کرتے ہوئے آبدیدہ ہو گئے۔ وزیرخارجہ خواجہ آصف نے پریس کانفرنس سے خطاب میں کہا بھارتی کارروائیاں کسی بڑے حادثے کا باعث بن سکتی ہیں۔ گجرات کی تاریخ مقبوضہ کشمیر میں دہرائی جا رہی ہے۔ پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے بھارتی مظالم کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے گجرات اور کشمیر کا قصائی نریندر مودی کشمیری عوام کے خون سے ہولی کھیل رہا ہے۔ انہوں نے کشمیر کے معاملے پر عالمی برادری کی جانب سے خاموشی اختیار کرنے پر اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے زور دیا عالمی برادری کو وادی میں بھارتی مظالم کا نوٹس لینا چاہئے۔ جے یو آئی (ف) کی مجلس شوریٰ کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمن نے کہا اقوام متحدہ کشمیر‘ فلسطین میں ریاستی دہشت گردی رکوائے۔ عالمی برادری فوری نوٹس لے کر قتل عام رکوائے۔ فلسطین‘ کشمیر میں مظالم کے خلاف جمعہ کو یوم احتجاج منائیں گے۔ خصوصی نامہ نگار کے مطابق امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے ایک بیان میں کشمیر میں بھارتی فوج کی اندھا دھند فائرنگ کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے بدترین ریاستی دہشتگردی قرار دیاہے اور کہاہے حکومت کی مجرمانہ خاموشی نے نہ صرف کشمیریوں بلکہ پاکستانی قوم کو بھی سخت مایوس کیا ہے۔ انہوںنے مطالبہ کیا حکومت پاکستان سفارتی سطح پر بھارتی دہشت گردی کے خلاف ایک منظم مہم چلائے۔ امیر جماعةالدعوة پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعیدنے کہا ہے کہ بھارت سرکار نے مقبوضہ کشمیر میں قتل و غارت گری کی انتہا کر دی۔ نہتے کشمیریوں کیخلاف کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال کیا جارہا ہے۔ مظلوم کشمیریوں کی نسل کشی پر بین الاقوامی اداروں کی خاموشی افسوسناک ہے۔ حکومت پاکستان مصلحت پسندی چھوڑ کر مظلوم کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کا کھل کر ساتھ دے۔ نوائے وقت رپورٹ کے مطابق حکومت مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورتحال پر پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلانے پر غور کر رہی ہے۔ حکومت نے کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کےلئے مظفر آباد میں جلسہ کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی جلسہ سے خطاب کریں گے۔ 20 بڑی دینی جماعتوں ورلڈ پاسبان ختم نبوت کے سربراہ علامہ محمد ممتاز اعوان سرپرست مولانا محمد الیاس چنیوٹی (ایم پی اے) عالمی تحریک تحفظ حرمین شریفین کے امیر مولانا زبیر احمد ظہیر‘ فرید احمد پراچہ‘ پیر اعجاز احمد ‘ مولانا امیر حمزہ ‘ ساجد نقوی‘ ڈاکٹر علامہ ریاض الرحمن یزدانی‘ مولانا زاہد الراشدی‘ پیر ولی اللہ شاہ بخاری‘ مولانا محمد حنیف حقانی‘ میاں محمد اویس‘ مولانا محمد نعیم بادشاہ‘ پیر جمشید احمد نورانی‘ علامہ وقارالحسن نقوی‘ علامہ اصغر عارف چشتی مصطفائی‘ اشرف عاصمی اور دیگر نے مشترکہ بیان میں کہ عالمی دنیا بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں مظلوم کشمیریوں کے قتل عام کا نوٹس لے۔ نوائے وقت رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ میں پاکستان کی مندوب ملیحہ لودھی نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں 20 بے گناہ نوجوانوں کا قتل قابل مذمت ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں موجودہ قتل و غارت وحشیانہ قبضے کی یاد دلاتا ہے۔ نہتے کشمیری بھارتی ظلم و استبداد کا شکار ہو رہے ہیں۔ پاکستان کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کی حمایت جاری رکھے گا۔ موجودہ ظلم و بربریت کے بعد اقوام متحدہ کی قرارداد پر فوری عمل ناگزیر ہے۔ سلامتی کونسل کی قرارداد پر عمل سے ہی جنوبی ایشیا میں امن قائم ہو گا۔ مسئلہ کشمیر کا پرامن حل سلامتی کونسل کی قراردادوں میں موجود ہے۔لاہور سے خصوصی نامہ نگار کے مطابق جموں کشمیر موومنٹ کے زیر اہتمام مقبوضہ کشمیر میں 20سے زائد نہتے کشمیریوں کو شہید کئے جانے کیخلاف چاروں صوبوں و آزاد کشمیر میں زبردست احتجاجی مظاہرے کئے گئے اور ریلیاں نکالی گئیں۔ لاہور کی طرح گوجرانوالہ،فیصل آباد، راولپنڈی، ملتان، کراچی، حیدرآباد، کوئٹہ، پشاور، سیالکوٹ، جہلم، وہاڑی اور دیگر شہروں میں ہونےو الے مظاہروں اور ریلیوں میں طلبائ، وکلائ، تاجروں اور سول سوسائٹی سمیت دیگر شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے ہزاروں افراد نے شرکت کی۔ سب سے بڑا مظاہرہ لاہور میں پریس کلب کے باہر ہوا جس میں جموں کشمیر موومنٹ سمیت مختلف مذہبی و سیاسی جماعتوں کے کارکنان اورشہریوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ مظاہروں اور ریلیوں کے اختتام پر کشمیری شہداءکی غائبانہ نماز جنازہ بھی ادا کی گئی۔ احتجاجی مظاہرہ سے جموں کشمیر موومنٹ کے مرکزی رہنما ابوالہاشم ربانی، سراج الدین ثاقب، احسان الحق شہباز، مولاناادریس فاروقی،حافظ عثمان شفیق، میاں محمود، حافظ مسعود الرحمن ، محمد اقبال و دیگر نے خطاب کیا۔ جمعیت علماءپاکستان ضلع لاہور کے زیر اہتمام اسرائیل کی طرف سے نہتے فلسطینی عوام پر گولہ باری اور قتل عام کے خلاف لاہور پریس کلب کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ اسلامی جمہوری اتحاد پاکسان کے سربراہ علامہ زبیر احمد ظہیر کی قیادت میں کارکنوں کا مقبوضہ کشمیر اور فلسطین میں ہونے والے مظالم کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ نامہ نگاران کے مطابق فیصل آباد، پاکپتن، وہاڑی، سیالکوٹ، نارووال، منڈی بہاﺅ الدین، جھنگ میں بھی مظاہرے کئے گئے۔ کراچی سے سٹاف رپورٹر کے مطابق جموں و کشمیر موومنٹ کے تحت کراچی پریس کلب کے باہربڑے احتجاجی مظاہرے کا اہتمام کیا گیا جس میں شہر بھر سے سینکڑوں افراد نے شرکت کی۔ مظاہرین نے شہدائے کشمیر کی غائبانہ نماز جنازہ بھی ادا کی جبکہ بھارت کا پرچم بھی نذر آتش کیا گیا۔ گوجرانوالہ سے نمائندہ خصوصی کے مطابق جموں و کشمیر موومنٹ گوجرانوالہ کے زیر اہتمام ریلی نکالی گئی جو مرکز اقصیٰ سے شروع ہوئی اور پریس کلب کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ جموں و کشمیر موومنٹ کے رہنما عمر اکرم ربانی نے خطاب کرتے ہوئے کہا بھارت سرکار کشمیریوں کی مضبوط جدوجہد آزادی سے بوکھلاہٹ کا شکار ہوکر نہتے کشمیریوں کا خون بہا رہی ہے۔ حافظ آباد/ ونیکے تارڑ سے نمائندہ نوائے وقت + نامہ نگار کے مطابق جموں و کشمیر موومنٹ کے زیر اہتمام پریس کلب کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ابوذر نے کہا بھارتی فوج کشمیریوں پر مظالم کے پہاڑ توڑ رہی ہے۔ ننکانہ صاحب سے نمائندہ نوائے وقت+ نامہ نگار کے مطابق جموں و کشمیر موومنٹ اور محمدیہ سٹوڈنٹس ننکانہ صاحب کے زیر اہتمام کشمیریوں پر بھارتی افواج کے مظالم کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی جس کی قیادت ضلعی رہنما محمد احسن نے کی۔ قصور سے نمائندہ نوائے وقت کے مطابق کشمیریوں پر ظلم و جبر کیخلاف جموں و کشمیر موومنٹ کے زیر اہتمام تحصیل روڈ پر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس میں شہریوں نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔

About Editor

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*